رانا ثناء اللہ مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف کی لاہور ہائیکورٹ میں پیشی کے لیے جا رہے تھے کہ لاہور پولیس نے ریگل چوک پر ان کی گاڑی کو روک لیا۔

پولیس اہلکاروں کا رانا ثناء اللہ سے کہنا تھا کہ گاڑی کی تلاشی دیں تو آگے جائیں گے جس پر رہنما ن لیگ نے کہا کہ جب تک میڈیا نہیں آئے گا میں گاڑی کی تلاشی نہیں دوں گا۔

رانا ثناء کا شہریار آفریدی اور ڈی جی اے این ایف کو عدالت میں بلانے کا مطالبہ
انسداد منشیات فورس نے ن لیگی رہنما رانا ثناء اللہ کو حراست میں لے لیا
رانا ثناء اللہ نے کہا کہ کوئی عدالت کا دروازہ کھٹکٹائے تو کوئی ادارہ پھر گرفتاری کے لیے گھر کا گھیراؤ نہیں کرتا لیکن مجھے خوف ہے یہ دوبارہ میری گاڑی میں منشیات نہ رکھ دیں۔

صدر مسلم لیگ ن پنجاب نے کہا کہ مجھے پولیس پر اعتبار نہیں ہے، انھوں نے پہلے بھی اپنے پاس سے 15 کلو ہیروئن میری گاڑی سے برآمد کی تھی۔

بعدازاں لاہور پولیس نے رانا ثناء اللہ کی گاڑی کو لاہور ہائیکورٹ جانے کی اجازت دیدی۔

Lahore police stopped to search Rana Sanaullah's car  لاہور پولیس نے رانا ثناء اللہ کی گاڑی تلاشی کیلئے روک لی 26 1 300x180

Sharing is caring share post