جان لیوا کرونا وائرس پاکستان پہنچ گیا
سالہ چینی انجینئر جو کہ پاکستان میں مقیم ہے
گزشتہ روز چینی انجینئر نے تکلیف محسوس کی جسے ملتان کے نشتر ہوسپٹل میں لایا گیا
کیوں کہ کرونا وائرس ایک جان لیوا وائرس ہے اور چین میں بہت تیزی سے پھیل رہا ہے جس کو روکنے کے لیے چینی حکومت بہت اقدامات کر رہی ہے
اور دوسرے ممالک بھی اس پر بہت زیادہ فکر مند ہے اور چائنہ سے آنے والے ہر آدمی کا ایئرپورٹ پر معائنہ کر رہے ہیں
پاکستان میں بھی اور ایئرپورٹ پر خصوصی کاؤنٹر اور چائنا سے آنے والے لوگوں کو کرونا وائرس دیکھنے کے لئے خاص طور پر انتظام کیے گئے ہیں جس آنے والے لوگوں کا چیک اپ کیا جاتا ہے
دوسرے ممالک اس پر بہت زیادہ کام کر رہے ہیں اور ایک فکرمندی سے تمام ایئرپورٹ پر ایمرجنسی لگائی گئی ہے اور چائنہ سے آنے والے ہر شخص کا چیک اپ کیا جارہا ہے
سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ چینی انجینئر بنا ٹیسٹ کے پاکستان میں کیسے داخل ہوگیا
اس پر تمام اداروں کو ہوش کے ناخن لینے کی ضرورت ہے
کیوں کہ خدانخواستہ اگر یہ وائرس ہمارے ملک کے اندر داخل ہو جاتا ہے تو ہمارے پاس اتنے وسائل نہیں ہے کہ ہم اس کا مقابلہ کر سکیں
جبکہ چائنا نے اس وائرس کی روک تھام کے لیے کرونا وائرس کے شکار مریضوں کے لیے ایک ہفتے کے اندر ایک ہزار بستر پر مشتمل ہسپتال بنانے کا اعلان کیا ہے جو کہ ایک ہفتے کے اندر پورا ہو جائے گا

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here