یونیورسٹی سے کیوں نکالا میرا جسم میری مرضی لبرل مافیاسرگرم؟سوشل میڈیا عوام یونیورسٹی انتظامیہ کے ساتھ کھڑی ہوگئی
انسانی حقوق کے نام پہ بے حیائی پھیلانے والی لبرل آنٹیا سرگرم میرا جسم میری مرضی والی فاؤنڈیشن کی پروپوز کر کہ سرعام بے حیائی
کو پروموٹ کرنے والوں کے ساتھ کھڑی ہوگئی
لاہور یونیورسٹی کافیصلہ جس میں پرپوز کرنے والے دونو سٹوڈنٹس کو یونیورسٹی سے نکال دیا گیا تھا جسکو سوشل میڈیا پہ سراہا گیا اس فیصلے کے خلاف وزارت انسانی حقوق نے نوٹس لے لیا وائس چانسلر کو خط لکھ کر دونوں طلبا کو یونیورسٹی میں دوبارہ داخلے کا بولا گیا
دوسری طرف سوشل میڈیا پہ وزرات انسانی حقوق کہ اس اقدام کی سخت مخالفت کی جا رہی ہے

Sharing is caring share post